ایم کیو ایم کے استعفوں سے ملک میں سیاسی بحران پیدا ہو سکتا ہے، وزیر اعظم اور اپوزیشن لیڈر نے ذمہ داری سونپی ہے کہ ایم کیو ایم سے استعفیٰ واپس لینے کی بات کروں ، اپنے موقف پر قائم ہوں، استعفیٰ ایک مرتبہ سپیکر اسمبلی یا سینیٹ چیئرمین کے دفتر پہنچ گیا تو وہ واپس نہیں لیا جا سکتا، آئینی ماہرین سے مشاورت کے بعد اگر مجھے اس پر دلائل دیئے تو کام شروع کروں گا، ہم کسی سے ذاتی عناد نہیں رکھتے جو آئین اور قانون کہتا ہے اس کی پاسداری ہم پر لازم ہے

جمعیت علماء اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کی پریس کانفرنس