ملک بھر میں پاکستان ریلوے کی 4340ایکڑ اراضی پر لینڈ مافیا اور بعض سرکاری اداروں کے قبضے میں ہے

سینیٹ قائمہ کمیٹی برائے ریلوے کے اجلاس میں انکشاف، کمیٹی کا کے پی کے بلوچستان اور پنجاب کے چیف سیکرٹریوں اور اٹارنی جنرل کی اجلاس میں عدم شرکت پر اظہار برہمی , صوبائی حکو متوں نے قبضہ واگزار نہ کر ایا تو سپریم کورٹ جائیں گے، دو سال کے اندر ادارے کی تمام اراضی کا ریکارڈ کمپیوٹرائز کر لیا جائیگا ، اقتصادری راہداری منصوبے میں ریلوے ٹریک کی اپ گریڈیشن کی فزیبلٹی رپورٹ تیاری کے مراحل میں ہے ، کسی حکومتی شخصیت کسی با اثر گروپ ادارے خواہ اس کا تعلق حکمران جماعت سے ہی کیوں نہ ہو بلا تفریق ریلوے کی انچ انچ زمین واپس لی جائیگی، وفاقی وزیر ریلوے سعدرفیق کی کمیٹی کوبریفنگ