اپوزیشن ارکان پی آئی اے بارے بل کو پڑھے بغیر تنقید کر رہے ہیں، اس میں قومی ایئرلائن کی نجکاری کا کوئی ذکر نہیں، صرف اسے کارپوریشن سے لمیٹڈ کمپنی بنانے اور اسے ابتری اور خسارے سے نکالنے کیلئے اقدامات تجویز کئے گئے، وزیراعظم یقین دہانی کروا چکے ہیں کہ ادارے کے ملازمین کی نوکریوں اور دیگر مراعات کو تحفظ حاصل رہے گا، لازمی سروس ایکٹ پیپلزپارٹی کے ا دوار اقتدار میں بھی نافذ رہا، پی پی پی کی گزشتہ حکومت نے پی آئی اے میں 3654 نئی بھرتیاں کیں، موجودہ حکومت نے صرف 693 نئے ملازم بھرتی کئے ، گزشتہ اڑھائی سالوں میں ادارے سے 2969 ملازم ریٹائر بھی ہوئے

قومی اسمبلی میں وفاقی وزیر موسمیاتی تبدیلی زاہد حامد کا پی آئی اے کی نجکاری بارے اپوزیشن کی تحریک پر بحث سمیٹتے خطاب