ڈاکٹر طاہر القادری نے سانحہ ماڈل ٹاؤن کا کیس فوجی عدالت میں بجھوانے کا مطالبہ کردیا، کیا حکمران ایک اور ”دھر نہ “چاہتے ہیں ؟ فوجی عدالت کے انصاف پر یقین ہے ،یہ کیسا نظام ہے جس میں طاقت ور گناہ کرنے پر حج کر لیتا ہے اور قتل کر کے جج کر لیتا ہے‘حکمران خود دہشت گردوں کی سر پرستی کر رہے ہیں ‘(ن) لیگ پنجاب میں سیاسی ‘معاشی ‘قانونی ‘نظر یاتی دہشت گردی کر رہی ہے اور دہشت گردوں کے پودوں کو پروان چڑھا رہے ہیں ‘افواج پاکستان کو ایسے دہشت گردوں کے خلاف بھی آپر یشن کر نا ہوگا ورنہ دہشت گردی کا مکمل خاتمہ اور امن کا قیام ممکن نہیں ہوسکے گا ‘ نیشنل ایکشن پلان میں (ن) لیگی حکومت سب سے بڑی رکاوٹ ہے ‘امن کے قیام کیلئے پنجاب کے قاتل حکمرانوں کے خلاف بھی آپر یشن کر نا ہوگا ‘پاکستان پہلے کی طرح مسائل کی دلدل میں پھنسا ہوا ہے، کرپشن اور دہشت گردی ملک کو کھائے جارہی ہے‘ میرے جسم میں جب تک خون کا ایک قطرہ بھی موجود ہے سانحہ ماڈ ل ٹاؤن کے قاتلوں سے بدلہ لوں گا‘جوانوں کو ہمیشہ پر امن رہنے کی تعلیم دی ورنہ سانحہ کے قاتلوں کے اب تک ٹکڑے ہو چکے ہوتے ‘قومی طلبہ کانفرنس سے خطاب