بھارت کیساتھ جنگ کسی مسئلہ کا حل نہیں آؤٹ آف باکس سلوشن ہی تلاش کر نا ہے ‘سیاسی اور سفارتی قائدین ، سوائے مذاکرات کے اس وقت دونوں ممالک کے پاس مذاکرا ت کے سوا کوئی اور چارہ موجود نہیں‘پٹھانکوٹ حملے پر دونوں ممالک کی جانب سے ذمہ دارانہ ردعمل پر خراج تحسین پیش کر تے ہیں‘دونوں ملک مشترکہ طورپرسکیورٹی کیلئے نظام وضع کر یں انٹیلی جنس شیئرنگ کریں ‘ دہشت گردی کے خلاف مشترکہ طورپر جنگ لڑیں‘کسی قسم کی تحقیقات کے بغیر باچہ خان یونیورسٹی پر حملے کا الزام بھارت پر نہیں لگانا چاہیے ‘جب بھی دونوں ممالک مسئلہ کشمیر کے حل کے قریب آنے لگتے ہیں اور بات چیت بہتر ہو نے لگتی ہے تو ” سکرپٹ“کے تحت کوئی نہ کوئی واقعہ ہو جاتا ہے‘چوہدری عتزاز احسن ‘سابق وزیر خارجہ خورشید محمود قصوری ‘ سابق ہائی کمشنر شاہد ملک ‘امتیاز عالم ‘دفاعی تجزیز نکار جنر ل (ر) غلام مصطفی کا خطاب اور قرادادیں