دیار غیر نہیں بلکہ وطن ثانی

ہفتہ جون    |    عارف محمود کسانہ

یورپ ، امریکہ اور دوسرے ممالک میں مستقل شہری کی حیثیت سے رہنے والوں کے لئے یہ دیار غیر نہیں البتہ وہ لوگ جو عارضی طور پر بیرون ملک رہ رہے ہوں اُن کے لئے وہ ملک دیار غیر ہوسکتاہے۔ جن لوگوں نے کسی دوسرے ملک میں قیام کے بعد وہاں کی شہریت حاصل کرلی، وہاں اپنا گھر بنا لیا، وہاں کی زبان سیکھ لی اور اُن کے بچے اس معاشرہ میں پروان چڑھ رہے ہیں وہ ملک اُن کے لئے دیار غیر نہیں بلکہ وطن ثانی ہے۔
اُن کی یہ ہجرت مستقل ہے اور اب اُن کا اور اُن کی آنے والے نسلوں کا مستقبل اسی ملک سے وابستہ ہے جہاں وہ مستقل شہری کی حیثیت سے رہ رہے ہیں۔ اُن کا وطن اب وہی ہے اور اُن کا جینا مرنا اسی سے وابستہ ہے ۔ انسانی تاریخ کی یہ ایک حقیقت ہے کہ ہجرت میں واپسی کا راستہ نہیں ہوتا۔

(خبر جاری ہے)

خودد رسول اکرم ﷺمکہ میں پیدا ہوئے اور ۵۳ سال وہاں رہنے کے بعد جب مدینہ ہجرت کرگئے تو پھر فتح مکہ کے بعد بھی واپس مدینہ تشریف لے گئے اور مکہ جو کہ اُن کا آبائی شہر تھا قیام نہ کیا۔

نہ صر ف رسول پاک بلکہ تمام صحابہ  بھی واپس مدینہ چلے گئے اور انہوں نے مکہ میں دوبارہ رہائش اختیار نہ کی۔ یہ انسانی فطرت ہے کہ جب وہ ایک مقام سے دوسرے مقام پر منتقل ہوتا ہے تو پھر وہی اُس کا ٹھکانہ بن جاتا ہے اور وہ اس کے لئے دیار غیر نہیں ہوتا۔ پاکستان ہمارا وطن تھا اور اُس سے محبت کبھی دل و دماغ سے محو نہیں ہوسکتی ۔ پاکستانی دنیا کے کسی خطہ میں بھی رہ رہے ہوں وہ ارض پاک کی مٹی کی خوشبو کو فراموش نہیں کرسکتے۔
اُن کے دل پاک وطن میں اپنے بہن بھائیوں اور والدین کے ساتھ دھڑکتے ہیں اور وہ دل وجاں سے پاکستان کی سلامتی اور خوشحالی کے لئے دعا گو ہیں۔ لیکن یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ پاکستان اُن کا ماضی تھا ور جن ممالک میں اب وہ مستقل شہری کی حیثیت سے رہ رہے وہ اُن کا حال اور مستقبل ہے اور اس اعتبار سے سویڈن ہمارے لئے دیار غیر نہیں بلکہ وطن ثانی ہے۔ ایک مسلمان جغرافیائی طور پر مقید نہیں ہوسکتا کیونکہ ہر ملک ملک ما است کہ ملک خدائے ما است۔
ہر ملک ہمارا ملک ہے کیونکہ ہر ملک رب کائنات کا ہے۔ جو لوگ اپنے آپ کو مغربی ممالک میں اپنے نظریات کی وجہ سے ذہنی کشمکش کا شکار ہیں اور اپنے آپ کو یہاں مس فٹ سمجھتے ہیں۔شہریت حاصل کرنے کے باوجود جہاں رہ رہے ہیں اسے پنا ملک نہیں سمجھتے انہیں چاہیے کہ یک طرفہ ٹکٹ لے کر اپنے آبائی وطن واپس چلے جائیں۔ جب میزبان ملک کی شہریت اختیار کرلی ہے تو اُسے اپنا ملک سمجھتے ہوئے حب الوطنی کا مظاہرہ کریں اور اس کی تعمیر و ترقی میں ایک ذمہ دار شہری کی حیثیت سے کردار ادا کریں۔
یورپ میں ہمارے مذہبی اجتماعات میں جہاں پاکستان کے لئے دعائیں کی جاتی ہیں وہاں میزبان ملک جہاں ہم رہ رہے ہیں اُسے بھی دعا میں یاد رکھنا چاہیے۔
چھ جون کو سویڈن کا قومی دن منایا جاتا ہے ۔ یہ دن جدید سویڈن کے معمار اول سمجھے جانے والے بادشاہ گستاف واسا کی ۱۵۲۳ء میں ہونے والی تخت نشینی کی یاد میں منایا جاتا ہے اور اس دن کا آغاز ۱۹۱۶ء سے ہوا جب سویڈن میں اولمپک کھیلیں منعقد ہوئیں۔ شروع میں یہ قومی دن نہیں تھا بلکہ اسے یوم پرچم کے نام سے منایا جاتا تھا اور اس دن سرکاری چھٹی بھی نہیں تھی۔
۱۹۸۳ء سے سویڈش پارلیمنٹ نے اسے قومی دن قرار دیا لیکن سرکاری چھٹی ۲۰۰۵ء سے شروع ہوئی۔ چھ جون کو چھٹی دینے کے لئے مئی میں ہونے والی white monday کی چھٹی ختم کی گئی۔ اب یہ دن سرکاری اہتمام سے منایا جاتا ہے ۔ نیلے اور پیلے رنگ کے پرچم لہرائے جاتے ہیں ۔ سٹاک ہوم میں دنیا کے سب سے بڑے کھلی فضا والے عجائب گھر میں بادشاہ سلامت تقریب کے مہمان خصوصی ہوتے ہیں جہاں تمام ممالک کے سفیر بھی موجود ہوتے ہیں۔
فضاؤں میں سویڈن کے قومی ترانے کی گونج ہوتی ہے۔ یہ ترانہ رچرڈ دیبیک نے ۱۸۴۴ء میں لکھا اور ۱۸۹۰ء میں اسے قومی ترانے کی حیثیت سے اختیار کیا گیا۔ سویڈن کا قومی اس ملک کے قابل فخرماضی اور روشن مستقبل کی عکاسی کرتے ہوئے جذبہ حب الوطنی ابھارتا ہے۔ اس میں وطن کی توتعریف اور محبت کے لئے وہی جذبات ہیں جو پاکستان کے ملی نغموں سوہنی دھرتی اللہ رکھے قدم قدم آباد اور اے وطن پاک وطن میں ہیں ۔ اس ترانے کا اردو ترجمہ میرے مطابق کچھ یوں ہے ۔
سویڈن کی سرزمین کو مخاطب کرتے ہوئے شاعر کہتا ہیکہ
تو قدیم ہے اور بے شک تو آزاد ہے۔ تیرے شمال کا پروقار پہاڑی سلسلہ۔ تیری پرسکون فضاوٴں کو سلام
تیری سوہنی دھرتی، روئے زمین کا حسین ترین خطہ، تیرا سورج، تیرا آسمان، تیری سر سبز زمین۔ تو زمانہ قدیم کے عظیم دور کا مظہر
دنیا بھر میں تیرے نام کے توقیر کی دھوم ۔ میں جانتا ہوں تو ایسے ہی ہے اور ہمیشہ رہے گا۔مجھے جینا بھی یہیں ہے اور مرنا بھی اسی شمالی خطہ ارضی میں ہے
میں ہمیشہ تجھے سنواروں گا اے میرے پیارے وطن۔
قسم ہے موت تک تیرا وفا دار رہوں گا تیری ارض وطن کی حفاظت کے لئے جسم و جاں قربان
تیرا پرچم ہمیشہ سر بلند رہے، معزز رہے۔ خدا کی قسم اس گھر کے لیئے لڑوں گا اور سب کچھ کروں گا ۔ سویڈن، میرے محبوب وطن تیری مٹی کے لئے.
تجھے پوری دنیا کے عوض بھی نہ دوں، کبھی نہ دوں۔ اے میرے محبوب وطن میرا جینا بھی تیرے لئے اور مرنا بھیتیرے لئے ہے۔ اسی شمالی سرزمین کے لئے۔
© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔
© www.UrduPoint.com

عارف محمود کسانہ کے ہفتہ جون کے مزید کالم