غیر معمولی حالات میں سپریم کورٹ کا غیر معمولی فیصلہ

بدھ اگست    |    چوہدری محمد افضل جٹ

سپریم کورٹ آف پاکستان کے چیف جسٹس جناب انور ظہیر جمالی کی سر پرستی میں اعلیٰ عدلیہ کے پانچ رکنی لارجر بنچ نے فوجی عدالتوں کی جانب سے پھانسی کی سزا کے مستحق ٹھہرائے جانے والے17 دہشت گردوں کی درخواستوں کو نا قابل سماعت گردانتے ہوئے مسترد کر دیا ہے اور فوجی عدالت کے فیصلے کو برقرار رکھتے ہوئے انسانیّت کے دشمنوں کو تختہ دار پر لٹکانے کا پر وانہ جاری کر دیا ہے لاجر بنچ نے اپنے فیصلے میں لکھا ہے کہ فوجی عدالتوں میں مجرموں کے حقوق کا پورا پورا تحفظ کیا گیا ہے دہشت گردوں کو ان کے جرم کے عین مطابق سزا دی گئی ہے پاکستان کے موجودہ حالات میں سپریم کورٹ کا موجودہ فیصلہ انتہائی غیر معمولی اہمیّت کا حامل ہے اعلیٰ عدلیہ کے جج صاحبان نے تو قانون و آئین کے مطابق اپنا فیصلہ سنایا ہے لیکن اس فیصلے پر پاکستانیوں نے جس خوشی اور مسرت کا اظہار کیا ہے اس سے لگتا ہے کہ سپریم کورٹ کا فیصلہ قوم کے جذبات و احساسات کا ترجمان ہے پوری قوم ان دہشت گردوں کے خلاف متحد ہے اور ان کی گردنوں کو لمبا ہوتا دیکھنا چاہتی ہے بیس کڑوڑ پاکستانیوں کی ایک ہی آروزو ہے اور ایک ہی خواہش ہے کہ پاک سر زمین کو ان دہشت گردوں کے ناپاک وجود سے پاک کر دیا جائے ان کی کمین گاہوں کو ملیا میٹ کر دیا جائے ان کے سہولت کاروں کے لئے یہ جہان عذاب بنا دیا جائے ان نرسریوں کو کھنڈرات میں بدل دیا جائے جہاں ان کی پرورش ہوتی ہے جس جگہ یہ دہشت گردی کا سبق لیتے ہیں ان کے خاتمہ کے لئے سارے قوانین کا بالائے طاق رکھ دیا جائے اور اگر ان کو واصل جہنم کرنے کے لئے آئین کو بھی تبدیل کر نا پڑے تو کر دیا جائے کیونکہ یہ ہمارے لئے ہمارے پیارے وطن کے لئے ہماری نسلوں کے لئے ہماری اقدارکے لئے ہماری بستیوں ہمارے قصبوں اور ہمارے شہروں کے لئے ایک ناسور ہیں ان کی دہشت گردانہ کا روائیوں نے نہ صرف ملک و قوم کو بدنام کرکے رکھ دیا ہے بلکہ ہمارا دین اسلام جو امن،محبت،سلامتی،بردباری،اخوت،بھائی چارے اور پیار کا پیامبر ہے شیطان کے ان پیروکاروں کی وجہ سے تنقید کی زد میں آیا ہوا ہے عدلیہ کے اس فیصلے سے نہ صرف شدت پسندوں کے حوصلے پست ہونگے بلکہ دہشت گردی بھی مزید کم ہو گی وگرنہ کون نہیں جانتا ماضی قریب میں وکلاء کچھ میڈیا ہاؤسز اور سابق چیف جسٹس کے گٹھ جوڑ نے دہشت گردی کو پروان چڑھانے میں جو رول ادا کیا ہے وہ انتہائی شرمناک اور نفرت انگیز ہے اگر وکلاء ان دہشت گردوں کی اپیلوں کی پیروی نہ کرتے اور جج خوف اور تشہیر کے دائروں سے نکل کر ملک وملت کے مفاد میں فیصلے کرتے تو آج دہشت گرد اس قدر مضبوط ہوتے نہ ہی پاکستان میں معصوم اور بے گناہ لوگ ان خون آشام بھیڑیوں کی دہشت گردی کی بھینٹ چڑھتے نہ مسجدوں میں خودکش حملے ہوتے نہ امام بارگاہوں میں لوگوں کو نشانہ بنایا جاتا نہ درس گاہوں میں خون کی ہولی کھیلی جاتی نہ قیام گاہوں میں موت کا رقص ہوتا اور نہ ہی پیارا دیس معاشی،معاشرتی اور اقتصادی طور پر اس قدر بد حال ہوتا۔

(خبر جاری ہے)


ایسے بگڑے ہیں حالات میرے وطن کے
عوام ہیں بے حال میرے وطن کے
شہر ویراں ویراں ہیں میرے وطن کے
گلی کوچے ہیں سنسان میرے وطن کے
دھواں دھواں سی فضاء ہے دیکھو ذرا
پرندے بارود سے ہیں پریشاں میرے وطن کے
پھولوں کے نگر میں گولیوں کی برسات ہوگئی
استاد سب ہیں پریشاں میرے وطن کے
کب کیسے کون سا قریہ لہو لہان ہو جائے
بچے ہیں افسردہ میرے وطن کے
روٹی بجلی نہ پانی بس اندھیرے کی حکمرانی
عوام ہیں نڈھال میرے وطن کے
© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔
© www.UrduPoint.com

متعلقہ عنوان

سپریم کورٹ


متعلقہ کالم