ہمیں بھی جمہوریت چاہیے مگر !

بدھ نومبر    |    ارشاد بھٹی

محترم اگر پہلی اور دوسری قوت کنٹرول میں ہو تو پھر تیسری قوت کا خوف نہیں ہوتا، قبلہ اگر بال ٹمپرنگ یا میچ فکسنگ نہ کی ہو تو پھر تھرڈ ایمپائر سے ڈر نہیں لگتااور حضورِ والا جب آپکی طرح آپکی جمہور بھی خوشحال ہو جائے گی تب آپکی جمہوریت کو بھی کوئی خطرہ نہیں رہے گا۔
ویسے قائد ِ ذی وقار! آپکو کس نے کہہ دیا کہ ہمیں جمہوریت نہیں چاہیے ،ہاں یہ سچ کہ ہم 20کروڑاب آمریت میں چھپی جمہوریت یا جمہوریت میں چھپی آمریت نہیں چاہتے ،لیکن یہ بھی سچ کہ ہمیں چاہیے جمہوریت ہی ،مگر وہ نہیں جو جمہور کو ڈنڈے مارے ، جو بوڑھوں کو سڑکوں پر گھسیٹے او رجوبہنوں اور بیٹیوں کی تعظیم نہ کرے ، ہمیں جمہوریت چاہیے مگر وہ نہیں جو دُکھ سُکھ کی ساتھی نہ ہو ، جس کی نظر میں سب برابر نہ ہوں ، جو تنقید پر غصہ کھائے اور جو Push upsسے بھی گھبرائے۔

(خبر جاری ہے)

ہمیں جمہوریت چاہیے مگر وہ نہیں جو اپنوں پر کڑکے، گرجے، برسے اور غیروں کے آگے بھیگی بلی بن جائے ، جو مودی کے ساتھ ہیپی برتھ ڈے کا کیک کاٹے اور جو حسینہ واجد کے سامنے گونگی بن جائے۔ ہمیں جمہوریت چاہیے مگر وہ جس میں یا تو ہربلاول بلٹ پروف کاروں میں پھرے یا پھر سب بلاول گلیوں اور بازاروں میں پیدل چلیں ، جس میں یاتو تمام حسنوں اور حسینوں کی” آف شور دولتیں“ نہ ہوں یا پھر سب ایک ہی رفتار سے ترقیاں کریں اورجس میں یا تو ہر مریم مقدر کی سکندر ہو یا پھر سب مریموں کا نصیب ایک سا ہو جائے ۔
ہمیں جمہوریت چاہیے مگر وہ جو یا تو بااختیاروں کی کرپشن روک لے یا پھر بے اختیاروں کی دونمبریا ں بھی برداشت کرے، جو یا تو صاحبوں کو بھی من مانی نہ کرنے دے ، یاپھر کمی کمینوں کی گستاخیاں بھی سہہ جائے اور جس میں یاتو سب تھانے کچہریوں میں دھکے کھائیں یا پھر سب کوبر وقت انصاف مل جائے۔ ہمیں جمہوریت چاہیے مگر وہ جس میں یا تو سب کو منرل واٹر ملے یا پھر سب کے معدوں میں ایک سا پانی جائے ، یاتو سب کا علاج سرکاری اسپتالوں میں ہو یاپھر سب چیک اپ باہر کروائیں اور جس میں یا تو سب کے بچے سرکاری اسکولوں میں پڑھیں یاپھر سب اپنے بچے انگریزی سکولوں میں پڑھائیں۔
ہمیں جمہوریت چاہیے مگر وہ جس میں یا تو سویلین اور ملٹری والے ایک Pageپر ہوں یا کوئی اپنی حد سے باہر نہ آئے،یا تو ہر قلم آزاد ہو یا پھر سب کیلئے ایک حد مقرر ہو جائے اور جس میں یاتو کسی کی کوئی نہ سنے یا پھر سب کی مانی جائے ۔ ہمیں جمہوریت چاہیے مگر وہ جس میں یا تواوپر والے بھی جوابدہ ہوں یا نیچے والوں کا کوئی سوال نہ رہے ، یا تو عوام کا خون بھی نہ بہے یا پھر دھماکوں میں ایاز کے ساتھ محمودبھی کام آئے ، یا تو پولیس کسی کی بھی حفاظتیں نہ کرے یا پھر” نتھو خیرا“بھی وی آئی پی ہو جائے اور جس میں یا تو بڑوں کو بھی ٹیکس بابو اور پٹواری تنگ کریں یا پھر سب کی جان چھوٹ جائے ۔
ہمیں جمہوریت چاہیے مگر وہ جس میں یا تو کوئی بھی کچھ چھپا نہ سکے یاکسی سے بھی کچھ پوچھا نہ جائے ،یاتو سب جھوٹ سزا وار ٹھہریں یا پھر کوئی سچ پہ پہرے نہ بٹھائے اور جس میں یا تو ٹیکسوں پرکوئی بھی موجیں نہ کرے یا پھر سب کو کھلی چھٹی مل جائے ۔ ہمیں جمہوریت چاہیے مگر وہ جس میں یاتو بڑے پیٹ بھی چاک ہوں یا سب کا پیٹ بھرے ، یاتو کسی چہرے پر لالیاں نہ ہوں یاکسی کا لاغر پن نہ رہے اور جس میں اگر عمران خان کا پرویز مشرف کے ریفرنڈم کا ساتھ دینا جرم ٹھہرے تو پھر ”ضیائی نرسری “ میں پھلنے پھولنے والوں سے بھی پوچھا جائے ۔

ہاں عالی جاہ! ہمیں چاہیے تو جمہوریت ہی مگر وہ نہیں جو صرف چند خاندانوں کی ، وہ بھی نہیں جو صرف مسکین عوام کی ، ہمیں وہ جمہوریت چاہیے جو سب کی ہو ، جو سب کو اپنا سمجھے، جو سب کو ایک سا پیار کرے، جو تلاشی لے توپھر تلاشی دے بھی ، لہذا قائدِ محترم اگر آپ ایسی جمہوریت دینے کیلئے تیار ہیں تو ”ست بسم اللہ “ ورنہ نہیں چاہیے محروم جمہوریت، غلام اور مظلوم جمہوریت، نہیں چاہیے متضاد اور متصادم وعدوں والی جمہوریت ، طفل تسلیوں اور خالی نعروں والی جمہوریت ، نہیں چاہیے وہ جمہوریت کہ جس میں کھلانے والے ہی کھانے والے اور دینے والے ہی لینے والے ، نہیں چاہیے وہ جمہوریت جس میں میرا بچہ آنسو گیس سے مرے تو قیمت 10لاکھ ،لیکن تیرے بچوں کو کوئی” چیک “ہی کرلے تو ساری جمہوریت خطرے میں پڑجائے ، نہیں چاہیے وہ جمہوریت کہ جس میں ایک فیصد کے لیئے تو ہر میوہ لیکن 99فیصد کے لیے صرف وعدہٴ حور، نہیں چاہیے وہ جمہوریت جو 150ملکوں میں کرپشن میں 103ویں ، شرح خواندگی میں 144ویں جبکہ غذائی قلت میں 103ویں نمبر پر ہو ، نہیں چاہیے وہ جمہوریت جو بدترین ساکھ کے اعتبار سے دنیا بھر میں تیسری اور لاقانونیت کے حوالے سے آٹھویں پوزیشن رکھے، نہیں چاہیے وہ جمہوریت کہ جس میں ہر کاروائی کے بعد ”شودر“ دھر لیئے جائیں اور” برہمن “ بچا لیئے جائیں اور نہیں چاہیے وہ جمہوریت کہ جس میں ہر واردات کے بعد بات ”آلہ قتل “ تک پہنچ کر ختم ہو جائے ،عالی مرتبت یہاں یہ Doubtبھی Clearکر تا جاوٴں کہ آپ ہر میچ اس لیئے نہیں جیت جاتے کہ آپکی بیٹنگ مضبوط یاہماری باوٴلنگ کمزور،آپکی پلاننگ اعلیٰ یاہماری Strategy ناقص،آپ اس لیئے ہر بار جیتواورہم اس لیئے ہر دفعہ ہا ریں کہ ہمارے ایمپائر ز بھی آپکے کھلاڑی بن گئے ، مگرظّلِ الہی آپ یہ تو جان ہی گئے ہوں گئے کہ اب اس کھیل تماشے کے خاتمے کے دن آپہنچے اور اب ایسی فلمیں اور ڈرامے دیکھے جانے کے دن بیت گئے ، تبھی تو ایک طرف لمحہ بہ لمحہ آپکی گھبراہٹ اور بے چینی بڑھتی جارہی، چہرے کا پسینہ اور چال میں لڑکھڑاہٹ واضح ہو تی جارہی اور دوسری طرف سب جان گئے کہ دال میں کچھ کالا نہیں ، ساری دال ہی کالی اور چور کی داڑھی میں تنکا نہیں بلکہ پوری داڑھی ہی تنکوں سے بھری ہوئی لہذا اس سے پہلے کہ سمے بیت جائے اب قبلہ آپ بھی یہ مان جائیں کہ اگر پہلی اور دوسری قوت کنٹرول میں ہو تو پھر تیسری قوت کا خوف نہیں ہوتا ، محترم اگر بال ٹمپرنگ یا میچ فکسنگ نہ کی ہو تو پھر تھرڈ ایمپائر سے ڈر نہیں لگتا اور حضورِوالا جب آپکی طرح آپکی جمہور بھی خوشحال ہوجائے گی تب آپکی جمہوریت کو بھی کوئی خطرہ نہیں رہے گا۔
© جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔
© www.UrduPoint.com

ارشاد بھٹی کے منگل نومبر کے مزید کالم