پنجاب کر پشن فر ی نہیں بلکہ ”کر پشن گڑھ “صوبہ بن چکا ہے‘مختلف صوبائی محکموں میں9ارب کی کر پشن کی جوڈیشل انکوائر ی کروائی جائے ‘ آڈیٹر جنرل نے مذکورہ کر پشن اور بے ضابطگیوں کی نشاندہی کر کے پنجاب حکومت کے کر پٹ ہونے کی تصد یق کر دی ہے ‘اب قوم کو سمجھ آرہی ہے کہ حکمران کیوں پنجاب میں نیب کو نہیں آنے دیتے ‘آج نہیں تو کل کر پشن کر نیوالوں کو اپنے انجام سے دور چار ہونا پڑ یگا اور تحر یک انصاف اقتدار میں آکر حکمرانوں سے کر پشن کی ایک ایک پائی کا حساب لیں گی

سابق گور نرو تحر یک انصاف پنجاب کے صدارتی امیدوار چوہدری محمدسرور کی وفود سے بات چیت