تھرپار کے باسیوں کیلئے ہر گزرتا لمحہ ایک نیا امتحان، امدادی کام جاری، غذائی قلت اور بیماریوں کے مارے ان لوگوں پر ناامیدی کے سائے اور گہرے ہوتے جا رہے ہیں۔ دودھ کے چند قطروں کو ترستے بچوں کو دیکھ کر والدین حسرت اور بے بسی کا مجسمہ بن کر رہ گئے،تھر میں صورت حال کی ذمہ دار حکومت سندھ ہے،تصدق جیلانی،سندھ میں جو کچھ ہو رہا ہے اسے دیکھ کر سر شرم سے جھک جانے چاہئیں‘ بتایا جائے تھر میں غذائی قلت اور علاج نہ ہونے کے باعث کل کتنی اموات ہوئیں ہیں، چیف جسٹس آف پاکستان