پاکستان میں ’کم عمری کی شادی سے پاک‘ علاقے بنائے جائیں گے،گورڈن براوٴن، بچیوں کو زبردستی شادی پر مجبور کرنا ’جدید دنیا میں قابلِ قبول نہیں ، اس سے ’لڑکیاں اپنی تعلیم اور بچپن کھو بیٹھتی ہیں،’ہم چاہتے ہیں کہ بچیوں کی حوصلہ افزائی کی جائے تا کہ وہ خود اپنے حقوق سے باخبر ہوں، اساتذہ اور لڑکیوں کی حوصلہ افزائی کی جائے کہ وہ مل جل کر کام کریں ، اقوامِ متحدہ پاکستان کو ایک کروڑ ڈالر جبکہ یورپی یونین ایک سو ملین یورو فراہم کریں گے تا کہ زیادہ سے زیادہ پاکستانی بچے سکول داخل ہو سکیں،انٹرویو