سال 2004میں پرویز مشرف نے اس ملک پر جنگ مسلط کی جو بدقسمتی سے آج تک جاری ہے، پروفیسر ابراہیم ، مشرف کہتے تھے کہ یہ چند لوگ ہیں جن کے خلاف جنگ کی جا رہی ہے جس سے ان سب کا فوری خاتمہ ہوگا لیکن وہ آج تک جاری ہے جس میں اب تک ہزاروں کی تعداد میں قیمتی جانیں ضائع ہو چکی ہیں اور لاکھوں کی تعداد میں لوگ بے گھر ہوچکے ہیں پرویز مشرف کے حکومت کے خاتمے کے بعد زرداری حکومت نے بھی پرویز مشرف کی پالیسی کو جاری رکھا جبکہ آج وزیر اعظم نواز شریف نے اس جنگ کے خاتمے کیلئے مذاکرات کی راہ اپنائی ہے اور ان کی خواہش ہے کہ ملک سے خونریزی کا خاتمہ ہو اور بات چیت ذریعے مسائل و مشکلات کئے جا سکے،بنوں میں اجتماع سے خطاب اور میڈیا سے بات چیت