حرم شریف کرین حادثہ

crane incident in haram sharif

حرم شریف میں صفاء اور مروا کے درمیان پیش آنے والا کرین حادثہ عین مقام ابراہیم کے عقب میں پیش آیا۔تفصیلات کے مطابق جمعة المبارک کا دن ہونے کی وجہ سے حرم شریف میں عازمین حج سمیت دیگر افراد کی بڑی تعداد موجود تھی، حادثے کے بعد بھی بیت اللہ کا طواف جاری رہا اورلبیک اللھم لبیک کی صدائیں گونجتی رہیں۔حرم شریف کرین حادثہ کے بعد سعودی حکومت نے تعمیراتی سیفٹی کے حوالے سے غور و فکر شروع کردیا.اس سلسلے میں ایک انکوائری کمیشن بھی ترتیب دیا گیاحرم شریف کرین حادثہ میں شہید ہونے والوں میں 15 پاکستانی بھی شامل ہیں۔ جاں بحق ہونے والے دیگر شہداء میں بنگلہ دیش، ایران کے 25،25، مصر کے 23، بھارت کے 10، ملائیشیا کے 6 شہری شامل ہیں، جبکہ شہید ہونے والوں میں الجزائر اور افغان شہری بھی شامل ہیںمکہ مکرمہ کرین حادثے میں سرکاری افسران کے علاوہ 5عہدیداروں کوبھی ذمہ دارٹھہرایاگیاان ملوث ذمہ داران کے خلاف مقدمہ بھی چلایاجائیگا، بن لادن کنسٹرکشن کمپنی کو حرم شریف میں پیش آنے والے کرین حادثے کا ذمہ دار ٹھہرایا گیا جس کے بعد سعودی شاہی دیوان کی جانب سے غور و فکر کے بعد کمپنی کو ملک بھر میں بلیک لسٹ کردیا گیا.

ہم معزرت خواہ ہیں 'حرم شریف کرین حادثہ' کی کوئی خبر موجود نہیں ہے