پیرس اٹیک

Paris Attack

13 نومبر 2015ء کی شام فرانس کے دار الحکومت پیرس اور سینٹ-ڈینس میں اجتماعی قتل اور حملوں کا سلسلہ شروع ہوا۔ حملہ کا آغاز مرکزی یورپی وقت کے مطابق 21:16 کو ہوا، تین علیحدہ علیحدہ دھماکے اورچھ جگہوں پر اجتماعی شوٹنگ کی واردات ہوئیں، اسی کے ساتھ سینٹ ڈینس کے شمالی مضافات میں فرانسیسی سٹیڈیم کے قریب بھی بم دھماکے ہوئے۔ سٹیڈیم کے قریب تین دھماکے ہوئے ہیں، دھماکوں کے وقت سٹیڈیم میں فرانس اور جرمنی کے درمیان فٹبال میچ ہو رہا تھا اور میچ دیکھنے کے لیے فرانس کے صدر فرانسوا اولاند اور وزیر اعظم بھی موجود تھے لیکن انہیں سٹیڈیم سے بحفاظت نکال لیا گیا۔ نیز متعدد مسلح افراد نے 100 سے زائد افراد کو یرغمال بنا لیا اور جب پولیس نے انھیں چھڑانے کی کوشش کی تو ان لوگوں نے یرغمال افراد کو گولیاں مار کر ہلاک کر دیا۔ پولیس حکام کا کہنا ہے کہ دار الحکومت پیرس کے مختلف علاقوں میں مسلح افراد کے حملوں اور دھماکوں میں کم سے کم 40 افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ فرانسیسی ذرائع ابلاغ نے پولیس کے حوالے سے کہا ہے کہ پیرس کے بٹا کلان تھیٹر میں یرغمال بنائے گئے تقریباً سو افراد کو ہلاک کر دیا گیا۔ پیرس کے ان حملوں میں کل 128 افراد ہلاک اور 250 زخمی ہوئے، جبکہ 99 افراد انتہائی تشویشناک حالت میں ہیں۔دوسری جانب آٹھ حملہ آور مارے گئے جن میں سات حملہ آوروں نے خودکشی کی ہے۔ ان حملوں کو دوسری جنگ عظم کے بعد فرانس میں پیش آنے والا سب سے ہلاکت خیز واقعہ مانا جا رہا ہے

'پیرس اٹیک' کی خبریں




پیرس اٹیک سے متعلقہ تصاویر

ایک خاتون پیرس حملہ میں ہلاک .. پیرس اٹیک کی مزید تصاویر

پیرس اٹیک سے متعلقہ ویڈیوز

24Breaking: Continue search for fugitives Paris attack پیرس اٹیک کی مزید ویڈیوز