کراچی پی این ایس مہران اٹیک

PNS Mehran attack

کراچی میں پی این ایس مہران پر دہشت گردوں کے حملے میں پاک بحریہ کے آٹھ اور رینجرز کے دو اہلکاروں نے جام شہادت نوش کیا جبکہ سولہ گھنٹے جاری رہنے والے کمانڈو ایکشن میں چار دہشت گردوں کو بھی ہلاک کر دیا گیا۔ پی این ایس مہران کراچی میں دہشت گردوں کے خلاف پاک فوج کے اسپیشل سروسز گروپ کے کمانڈو آپریشن دوپہر تین بجے تک مکمل ہو گیا۔ دہشت گردوں نے اتوار کی رات پونے دس بجے پی این ایس مہران پر حملہ کیا تھا جس کے دوران بحریہ کے لیفٹیننٹ یاسر عباس سمیت آٹھ اہلکار شہید ہو گئے جبکہ ایک پی تھری سی جہاز تباہ ہوگیا اور ایک طیارے کو نقصان پہنچا۔ کئی گھنٹے مقابلے کے بعد صبح فائرنگ کی آوازیں رک گئیں جس سے لگا کہ دہشت گردوں نے ہتھیار ڈال دیئے ہیں، لیکن ڈیڑھ گھنٹے کے بعد انہوں نے دوبارہ فائرنگ شروع کر دی۔ کمانڈوز کی کارروائی میں چار دہشتگرد مارے گئے جن کی عمریں 20 سے 25 سال کے درمیان تھیں۔پاک بحریہ کے سربراہ ایڈمرل نعمان بشیر نے آپریشن مکمل ہونے کا اعلان کرتے ہوئے بتایا کہ تحقیقات کا حکم دے دیا گیا ہے۔ نیول چیف نے کہا کہ دہشت گردوں نے چھ راکٹ فائر کئے تو نیوی اہلکار تین منٹ کے اندر جوابی کارروائی کرتے ہوئے جہازوں کو خطرے کی حدود سے دور لے کر گئے۔ ایڈمرل نعمان بشیر نے بتایا کہ ایک دہشت گرد نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا جبکہ دو فرار ہوگئے۔ انہوں نے بتایا کہ پی این ایس مہران پر امریکی اور چینی شہریوں سمیت غیر ملکی بھی موجود تھے.

پی این ایس مہران میں اس آپریشن کے دوران دہشت گردوں سے بھاری مقدار میں اسحلہ، راکٹ لانچر، ہینڈ گرینڈ اور خود کش جیکٹس بھی برآمد ہوئی.سکیورٹی اہلکاروں نے اپنی جان کا نذرانہ پیش کرکے قوم کو بڑے نقصان سے بچایا ہے۔ شہید لیفٹیننٹ یاسر کے لئے ستارہ بسالت اور دیگر جوانوں کو ستارہ شجاعت دینے کی سفارش کی گئی

ہم معزرت خواہ ہیں 'کراچی پی این ایس مہران اٹیک' کی کوئی خبر موجود نہیں ہے