پڑتال


ہفتہ اکتوبر

پرنام سنگھ لدھیانہ یونیورسٹی کا امتحان دے رہا تھا۔ امتحانی پرچہ کچھ یوں بنا ہوا تھا کہ سوال جواب صحیح یا غلط لکھ کر دینا تھا۔ پرچہ خاصا طویل تھا۔ پرنام سنگھ بہت انہماک سے پرچہ حل کرنے میں جٹا ہوا تھا۔ نگران ٹہلتا ہوا پرنام سنگھ کے پاس پہنچا تو اس نے دیکھا کہ پرنام سنگھ نے ایک روپے کا سکہ ہاتھ میں پکڑا ہوا ہے۔ ہر سوال پر وہ اسے اُچھا لتاہے، سکے کا رخ دیکھتاہے اور سوال کا جواب غلط یا صحیح لکھ دیتاہے۔ نگران بہت حیران ہوا، اس نے پوچھا، ”کا کا جی… ایہہ کیہہ کر رہے او؟“ پرنام سنگھ کہنے لگا”سرجی!پرچہ حل کر رہیا واں!“ نگران کہنے لگا،”پرتسی بار بار روپیہ سٹ کے”ٹاس“ کیوں کر رہے او؟“ پرنام سنگھ بولا،”سرجی! ایہہ سائنس اے! ڈیڑھ سو سوال نیں، میں ہر سوال تے ٹاس کرنا واں، سیدھا پاسا آوے تے جواب ٹھیک، پُٹھا پاسہ آوے تے جواب غلط، سائنس ایہہ کہندی اے کہ ایس طراں میرے ادھے جواب ضرور ٹھیک ہون گے!“ نگران پرنام سنگھ کے”سائنس“ کے علم سے بہت متاثر ہوا اور واپس چلا گیا۔

(خبر جاری ہے)

پرچے کا وقت ختم ہونے والاتھا تو وہ پھر پر نام سنگھ کے پاس آیا، دیکھا کہ پرنام سنگھ بار بار سکہ اچھال رہا ہے،ساتھ میں گالیاں بھی دے رہا ہے! اس نے پوچھا! ”کا کاجی… کیہہ گل اے ، بڑے غصے وچ او؟“ پڑتال کرن واسطے ٹاس کرناواں تے بھونتی دا جواب کجھ ہور آؤنداوے۔“




متعلقہ عنوان

مزاح

متفرق مزاح